Wearing a Watch in the State of Iḥrām

Question:

Is it permissible to wear a watch in the state of Ihram?

(Question published as received)

Answer:

In the Name of Allah, the Most Gracious, the most Merciful.

It is permissible to wear a watch in the state of iḥrām. However, one should ensure that the watch does not distract one from worship etc. Smartwatches contain many features and apps which could easily divert one’s attention from worship. Hence, it is better to avoid wearing a smartwatch in the state of iḥrām.

And Allah knows best

(Mufti) Bilal al-Mahmudi

27 Ramadan 1443 / 28 April 2022

Concurred by: Mufti Zameelur Rahman


قوله (أي كل معمول الخ) أشار به إلى أن المراد الممنع عن لبس المخيط وإنما خص المذكورات لذكرها في الحديث وفي البحر عن مناسك ابن أمير حاج الحلبي أن ضابطه لبس كل شيء معمول على قدر البدن أو بعضه بحيث يحيط به بخياطة أو تلزيق بعضه ببعض أو غيرهما ويستمسك عليه بنفس لبس مثله إلا المكعب اھ (رد المحتار، ج ٢، ص ٤٨٩)

جہاں تک گھڑی دیکھنے کی بات ہے، تو نماز میں کوئی بھی ایسا عمل جو نماز کی طرف سے توجہ کو ہٹادے، کراہت سے خالی نہیں، اور ظاہر ہے کہ یہ بھی ان افعال میں سے ہے، اس لیے اس سے اجتناب کرناچاہئے، تاہم اگر گھڑی دیکھ کر ٹائم کو سمجھ لیں، لیکن زبان سے کوئی لفظ نہ بولے تو اس سے نماز فاسد نہیں ہوتی، چنانچہ فقہاء نے لکھا ہے کہ محراب پر قرآن کے علاوہ کچھ لکھا ہوا ہے، نمازی اسے دیکھے اور سمجھ لے تو نماز فاسد نہیں ہوگی (کتاب النوازل۔ ج ۲ ص ١٦٤)

(معلم الحجاج، گابا سنٹر کراچی)

SUBSCRIBE

Subscribe to our mailing list and receive the latest posts directly to your inbox.

You have been subscribed. Please check your email to confirm your subscription.